خیبر پختونخواہ حکومت نے سوات سے تعلق رکھنے والے تمام سپیشل پولیس فورس کے جوانوں کو مستقل کردیا

0
52

سوات پولیس کے ترجمان کے مطابق گزشتہ روز ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر قاسم علی خان نے سپیشل پولیس فورس کو ریگولر فورس میں شامل کرنے کی آرڈر پر باقاعدہ دستخط کر دیا ۔
مستقل ہونے والے 2163 سپیشل پولیس فورس میں 56 لیڈی کانسٹیبل بھی شامل ہیں۔ ضلعی پولیس سربراہ قاسم علی خان نے سپیشل پولیس فورس کو ریگولر فورس میں شامل ہونے پر مبارکباد پیش کیا۔

قاسم علی خان کا کہنا تھا کہ سپیشل پولیس فورس نے گزشتہ کشیدہ حالات میں پاک فوج اور خیبر پختونخواہ پولیس کے ساتھ مل کر ایک پرچم تلے دہشت گردی کا مردانہ وار مقابلہ کرتے ہوئے اپنے جانوں کے نذرانے پیش کئے اور صوبے میں امن و امان برقرار رکھنے کے لئے کردار ادا کیا۔

انکا مزید کہنا تھا کہ انکی قربانیوں کی بدولت آج ضلع سوات سمیت پورے ملاکنڈ ڈویژن میں امن برقرار ہے۔

ضلعی پولیس آفیسر نے یہ بھی کہا کہ سپیشل پولیس فورس پہلے بھی فورس کا حصہ تھے اور آج بھی فورس کا حصہ ہیں اور اُمید رکھتا ہوں کہ وہ اپنے ڈیوٹی پہلے سے بھی اچھے اور اور احسن طریقے سے نبھائیں گے۔ مستقل ہونے پر سپیشل پولیس فورس کے جوانوں نے خوشی کا اظہار کیا اور ایک دوسرے کو مبارکباد دی،

سپیشل پولیس فورس کے جوانوں نے یہ عہد کیا کہ جس طرح اپنے وطن عزیز کے دفاع کے خاطر پہلے بھی قربانیاں دی ہے اس طرح آج اور کل بھی کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرینگے۔

یاد رہے کہ وزیراعلیٰ محمود خان نے گزشتہ سال اپریل کے مہینے میں اعلان کیا گیا تھا کہ ملاکنڈ اور سوات کے تقریباً 7000 ہزار سپیشل پولیس فورس اہلکاروں کو مستقل کیا جائے گا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here